30 C
Lahore
Tuesday, October 19, 2021

ذہنی بیماریوں سے بچنے کے 7 فائدہ مند طریقے

ایک انسان کی تندرستی اس وقت تک ممکن نہیں، جب تک کہ اس کی دماغی صحت ٹھیک نہ ہو۔ دماغ کا تعلق انسان کے سوچنے، سمجھنے، اور احساسات سے ہوتا ہے۔

جس طرح ہم اپنی خوراک کی مقدار کو درست رکھتے ہیں۔ اسی طرح ہمارے دماغ کی بھی چند ضروریات ہوتی ہیں۔ جن سے ہماری دماغی صحت سے ٹھیک رہتی ہے۔

ہمارے معاشرے میں ایسے بہت سے لوگ ہوتے ہیں، جو احساسِ محرومی میں مبتلا ہوتے ہیں۔ کچھ لوگ بہت جذباتی ہوتے ہیں۔ اور کئی خود پرستی کا شکار ہوتے ہیں۔ ان تمام باتوں کی وجہ سے انسان اپنی زندگی کو صحت مند نہیں گزار سکتا۔ ہم آج آپ کو چند ذہنی بیماریوں کے متعلق بتاتے ہیں۔

:پُر اعتماد ہونا

جب تک انسان کو خود پر یقین نہیں ہو گا، تب تک وہ کوئی بھی کام ٹھیک نہیں کر سکتا۔ ایک انسان کو اپنی قابلیت پر یقین رکھنا چاہیئے، انسان کو اپنی صلاحیتوں کو پہچاننا لازم ہے۔ جب آپ کو خود پر یقین ہوگا، تو کتنا بھی مشکل کام ہو وہ آپ باآسانی کر لیں گے۔

:اپنی کامیابیوں کو پہچاننا

جب ایک انسان اپنی کامیابیوں کو سمجھتا ہے، اور انہیں استعمال میں لاتا ہے تو، اس کی وجہ سے بہت تبدیلی آتی ہے۔ یہ تبدیلی مثبت ہوتی ہے، اس کی مدد سے انسان کو اپنی زندگی میں ترقی حاصل کرنے میں حوصلہ افزائی ملتی ہے۔

:خود سے پیار کرنا

خود سے پیار کرنے کا مطلب یہ نہیں کہ آپ خود پرست بن جائیں۔ اپنے آپ سے پیار کرنے کا مطلب یہ ہے کہ، خود کو عزت دینا، اور اپنے اندر کے مثبت پہلوؤں کو اجاگر کرنا ہے۔ جب آپ خود کو پیار کریں گے تو، اس سے ذہنی صحت کو بہت تندرستی حاصل ہوگی۔ اس عمل کی وجہ سے آپ خود کو کسی کے سامنے کمتر محسوس نہیں کریں گے۔ اس عمل کو نہ کرنے سے، آپ کی ذہنی صحت کمزور ہو سکتی ہے۔۔

:عاجزی و انکساری کو اپنانا

ایک انسان کو ہمیشہ عاجز بن کے رہنا چاہیئے۔ کیونکہ جب بھی تیز طوفان آتا ہے، تو درختوں کو بہت نقصان پہنچتا ہے۔ لیکن گھاس محفوظ رہتی ہے، وہ اس لیے کہ گھاس اپنی عاجزی کی وجہ سے کسی بڑے نقصان سے محفوظ رہتی ہے۔ لیکن درخت اپنے تناؤ کی وجہ سے نقصان کا شکار ہوتے ہیں۔

اسی طرح ایک انسان جب عاجز بن کے رہتا ہے، تو اس کی شخصیت دوسروں کے سامنے اچھی نظر آتی ہے۔ اسی وجہ سے انسان کا دماغ اپنی درست حالت میں رہتا ہے۔

:خود کو صاف ستھرا رکھنا

ویسے تو ہم سب اس بات سے واقف ہیں کہ، صفائی نصف ایمان ہے۔ایک انسان جو کہ خود کو صاف رکھتا ہو، پرفیوم لگاتا ہو، کپڑے اچھے ہوں، بات کرنے کا لہجا درست ہو، تو لوگ بھی ایسے شخص سے بات کرنا پسند کرتے ہیں۔ بجائے کے اس شخص کے، جو صفائی ستھرائی کا خیال بلکل نہ رکھتا ہو۔

جب انسان صاف ستھرا ہو تو اس کی شخصیت دوسروں کو اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ اس لیے انسانی ذہن بھی اس بات سے خوش ہوتا ہے۔

:منطق

اس صورتحال میں ایسا ہوتا ہےکہ، اگر ایک دوست نے اپنے دوست کی کسی مشکل وقت میں مدد نہیں کی، تو اس کا دوست سمجھتا ہے کہ یار اس بندے نے میری مدد نہیں کی۔ حالانکہ میں اس کے ساتھ اتنے اچھے طریقے سے ملتا ہوں اور بات چیت کرتا ہوں۔ اس طرح کے واقعات ہماری زندگی میں کئی مرتبہ سرزد ہوئے ہونگے۔ اس طرح کے حالات میں ہم یہ بات ہرگز نہیں سوچتے کہ اگر اس بندے نے میری مدد نہیں کی تو کوئی وجہ ہو سکتی ہے۔

اگر ہم ان باتوں کو منطق سوچ سے سوچیں تو ہم اس کشمکش سے آزاد ہو سکتے ہیں۔ جو کہ ہماری دماغی صحت کے لیے فائدہ مند ہے۔

:احساسِ محرومی

احساس محرومی ایک ایسا مسئلہ ہے، جس کی وجہ سے ہم اپنی زندگی میں بہت نقصان حاصل کرتے ہیں۔ اس کے پاس میرے سے زیادہ پیسہ ہے، وہ زیادہ خوبصورت ہے، میرے پاس اس کے جیسی گاڑی نہیں ہے۔ ہم اپنی زندگی میں اس طرح کے جملے اکثر سُنتے ہیں۔ انہیں باتوں سے انسان کی دماغی صورتحال کا پتا چلتا ہے۔

جب انسان اس طرح کی باتوں کا شکار ہوتا ہے۔ تو وہ ان باتوں کی اُلجھن میں اپنی زندگی کی خوبصورتی کو بھی تباہ کر لیتا ہے۔ کسی دوسرے کی چیز کو پانے کی جدوجہد میں، وہ اپنی چیز سے بھی ہاتھ دھو بیٹھتا ہے۔ احساسِ محرومی سے بچنے کا ایک ہی حل ہے کہ، ہمارے پاس جو بھی ہے۔ ہم اس کا شکر ادا کریں۔

ایک انسان کی تندرستی اس وقت تک ممکن نہیں، جب تک کہ اس کی دماغی صحت ٹھیک نہ ہو۔ دماغ کا تعلق انسان کے سوچنے، سمجھنے، اور احساسات سے ہوتا ہے۔

جس طرح ہم اپنی خوراک کی مقدار کو درست رکھتے ہیں۔ اسی طرح ہمارے دماغ کی بھی چند ضروریات ہوتی ہیں۔ جن سے ہماری دماغی صحت سے ٹھیک رہتی ہے۔

ہمارے معاشرے میں ایسے بہت سے لوگ ہوتے ہیں، جو احساسِ محرومی میں مبتلا ہوتے ہیں۔ کچھ لوگ بہت جذباتی ہوتے ہیں۔ اور کئی خود پرستی کا شکار ہوتے ہیں۔ ان تمام باتوں کی وجہ سے انسان اپنی زندگی کو صحت مند نہیں گزار سکتا۔ ہم آج آپ کو چند ذہنی بیماریوں کے متعلق بتاتے ہیں۔

:پُر اعتماد ہونا

جب تک انسان کو خود پر یقین نہیں ہو گا، تب تک وہ کوئی بھی کام ٹھیک نہیں کر سکتا۔ ایک انسان کو اپنی قابلیت پر یقین رکھنا چاہیئے، انسان کو اپنی صلاحیتوں کو پہچاننا لازم ہے۔ جب آپ کو خود پر یقین ہوگا، تو کتنا بھی مشکل کام ہو وہ آپ باآسانی کر لیں گے۔

:اپنی کامیابیوں کو پہچاننا

جب ایک انسان اپنی کامیابیوں کو سمجھتا ہے، اور انہیں استعمال میں لاتا ہے تو، اس کی وجہ سے بہت تبدیلی آتی ہے۔ یہ تبدیلی مثبت ہوتی ہے، اس کی مدد سے انسان کو اپنی زندگی میں ترقی حاصل کرنے میں حوصلہ افزائی ملتی ہے۔

:خود سے پیار کرنا

خود سے پیار کرنے کا مطلب یہ نہیں کہ آپ خود پرست بن جائیں۔ اپنے آپ سے پیار کرنے کا مطلب یہ ہے کہ، خود کو عزت دینا، اور اپنے اندر کے مثبت پہلوؤں کو اجاگر کرنا ہے۔ جب آپ خود کو پیار کریں گے تو، اس سے ذہنی صحت کو بہت تندرستی حاصل ہوگی۔ اس عمل کی وجہ سے آپ خود کو کسی کے سامنے کمتر محسوس نہیں کریں گے۔ اس عمل کو نہ کرنے سے، آپ کی ذہنی صحت کمزور ہو سکتی ہے۔۔

:عاجزی و انکساری کو اپنانا

ایک انسان کو ہمیشہ عاجز بن کے رہنا چاہیئے۔ کیونکہ جب بھی تیز طوفان آتا ہے، تو درختوں کو بہت نقصان پہنچتا ہے۔ لیکن گھاس محفوظ رہتی ہے، وہ اس لیے کہ گھاس اپنی عاجزی کی وجہ سے کسی بڑے نقصان سے محفوظ رہتی ہے۔ لیکن درخت اپنے تناؤ کی وجہ سے نقصان کا شکار ہوتے ہیں۔

اسی طرح ایک انسان جب عاجز بن کے رہتا ہے، تو اس کی شخصیت دوسروں کے سامنے اچھی نظر آتی ہے۔ اسی وجہ سے انسان کا دماغ اپنی درست حالت میں رہتا ہے۔

:خود کو صاف ستھرا رکھنا

ویسے تو ہم سب اس بات سے واقف ہیں کہ، صفائی نصف ایمان ہے۔ایک انسان جو کہ خود کو صاف رکھتا ہو، پرفیوم لگاتا ہو، کپڑے اچھے ہوں، بات کرنے کا لہجا درست ہو، تو لوگ بھی ایسے شخص سے بات کرنا پسند کرتے ہیں۔ بجائے کے اس شخص کے، جو صفائی ستھرائی کا خیال بلکل نہ رکھتا ہو۔

جب انسان صاف ستھرا ہو تو اس کی شخصیت دوسروں کو اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ اس لیے انسانی ذہن بھی اس بات سے خوش ہوتا ہے۔

:منطق

اس صورتحال میں ایسا ہوتا ہےکہ، اگر ایک دوست نے اپنے دوست کی کسی مشکل وقت میں مدد نہیں کی، تو اس کا دوست سمجھتا ہے کہ یار اس بندے نے میری مدد نہیں کی۔ حالانکہ میں اس کے ساتھ اتنے اچھے طریقے سے ملتا ہوں اور بات چیت کرتا ہوں۔ اس طرح کے واقعات ہماری زندگی میں کئی مرتبہ سرزد ہوئے ہونگے۔ اس طرح کے حالات میں ہم یہ بات ہرگز نہیں سوچتے کہ اگر اس بندے نے میری مدد نہیں کی تو کوئی وجہ ہو سکتی ہے۔

اگر ہم ان باتوں کو منطق سوچ سے سوچیں تو ہم اس کشمکش سے آزاد ہو سکتے ہیں۔ جو کہ ہماری دماغی صحت کے لیے فائدہ مند ہے۔

:احساسِ محرومی

احساس محرومی ایک ایسا مسئلہ ہے، جس کی وجہ سے ہم اپنی زندگی میں بہت نقصان حاصل کرتے ہیں۔ اس کے پاس میرے سے زیادہ پیسہ ہے، وہ زیادہ خوبصورت ہے، میرے پاس اس کے جیسی گاڑی نہیں ہے۔ ہم اپنی زندگی میں اس طرح کے جملے اکثر سُنتے ہیں۔ انہیں باتوں سے انسان کی دماغی صورتحال کا پتا چلتا ہے۔

جب انسان اس طرح کی باتوں کا شکار ہوتا ہے۔ تو وہ ان باتوں کی اُلجھن میں اپنی زندگی کی خوبصورتی کو بھی تباہ کر لیتا ہے۔ کسی دوسرے کی چیز کو پانے کی جدوجہد میں، وہ اپنی چیز سے بھی ہاتھ دھو بیٹھتا ہے۔ احساسِ محرومی سے بچنے کا ایک ہی حل ہے کہ، ہمارے پاس جو بھی ہے۔ ہم اس کا شکر ادا کریں۔

ایک انسان کی تندرستی اس وقت تک ممکن نہیں، جب تک کہ اس کی دماغی صحت ٹھیک نہ ہو۔ دماغ کا تعلق انسان کے سوچنے، سمجھنے، اور احساسات سے ہوتا ہے۔

جس طرح ہم اپنی خوراک کی مقدار کو درست رکھتے ہیں۔ اسی طرح ہمارے دماغ کی بھی چند ضروریات ہوتی ہیں۔ جن سے ہماری دماغی صحت سے ٹھیک رہتی ہے۔

ہمارے معاشرے میں ایسے بہت سے لوگ ہوتے ہیں، جو احساسِ محرومی میں مبتلا ہوتے ہیں۔ کچھ لوگ بہت جذباتی ہوتے ہیں۔ اور کئی خود پرستی کا شکار ہوتے ہیں۔ ان تمام باتوں کی وجہ سے انسان اپنی زندگی کو صحت مند نہیں گزار سکتا۔ ہم آج آپ کو چند ذہنی بیماریوں کے متعلق بتاتے ہیں۔

:پُر اعتماد ہونا

جب تک انسان کو خود پر یقین نہیں ہو گا، تب تک وہ کوئی بھی کام ٹھیک نہیں کر سکتا۔ ایک انسان کو اپنی قابلیت پر یقین رکھنا چاہیئے، انسان کو اپنی صلاحیتوں کو پہچاننا لازم ہے۔ جب آپ کو خود پر یقین ہوگا، تو کتنا بھی مشکل کام ہو وہ آپ باآسانی کر لیں گے۔

:اپنی کامیابیوں کو پہچاننا

جب ایک انسان اپنی کامیابیوں کو سمجھتا ہے، اور انہیں استعمال میں لاتا ہے تو، اس کی وجہ سے بہت تبدیلی آتی ہے۔ یہ تبدیلی مثبت ہوتی ہے، اس کی مدد سے انسان کو اپنی زندگی میں ترقی حاصل کرنے میں حوصلہ افزائی ملتی ہے۔

:خود سے پیار کرنا

خود سے پیار کرنے کا مطلب یہ نہیں کہ آپ خود پرست بن جائیں۔ اپنے آپ سے پیار کرنے کا مطلب یہ ہے کہ، خود کو عزت دینا، اور اپنے اندر کے مثبت پہلوؤں کو اجاگر کرنا ہے۔ جب آپ خود کو پیار کریں گے تو، اس سے ذہنی صحت کو بہت تندرستی حاصل ہوگی۔ اس عمل کی وجہ سے آپ خود کو کسی کے سامنے کمتر محسوس نہیں کریں گے۔ اس عمل کو نہ کرنے سے، آپ کی ذہنی صحت کمزور ہو سکتی ہے۔۔

:عاجزی و انکساری کو اپنانا

ایک انسان کو ہمیشہ عاجز بن کے رہنا چاہیئے۔ کیونکہ جب بھی تیز طوفان آتا ہے، تو درختوں کو بہت نقصان پہنچتا ہے۔ لیکن گھاس محفوظ رہتی ہے، وہ اس لیے کہ گھاس اپنی عاجزی کی وجہ سے کسی بڑے نقصان سے محفوظ رہتی ہے۔ لیکن درخت اپنے تناؤ کی وجہ سے نقصان کا شکار ہوتے ہیں۔

اسی طرح ایک انسان جب عاجز بن کے رہتا ہے، تو اس کی شخصیت دوسروں کے سامنے اچھی نظر آتی ہے۔ اسی وجہ سے انسان کا دماغ اپنی درست حالت میں رہتا ہے۔

:خود کو صاف ستھرا رکھنا

ویسے تو ہم سب اس بات سے واقف ہیں کہ، صفائی نصف ایمان ہے۔ایک انسان جو کہ خود کو صاف رکھتا ہو، پرفیوم لگاتا ہو، کپڑے اچھے ہوں، بات کرنے کا لہجا درست ہو، تو لوگ بھی ایسے شخص سے بات کرنا پسند کرتے ہیں۔ بجائے کے اس شخص کے، جو صفائی ستھرائی کا خیال بلکل نہ رکھتا ہو۔

جب انسان صاف ستھرا ہو تو اس کی شخصیت دوسروں کو اپنی طرف متوجہ کرتی ہے۔ اس لیے انسانی ذہن بھی اس بات سے خوش ہوتا ہے۔

:منطق

اس صورتحال میں ایسا ہوتا ہےکہ، اگر ایک دوست نے اپنے دوست کی کسی مشکل وقت میں مدد نہیں کی، تو اس کا دوست سمجھتا ہے کہ یار اس بندے نے میری مدد نہیں کی۔ حالانکہ میں اس کے ساتھ اتنے اچھے طریقے سے ملتا ہوں اور بات چیت کرتا ہوں۔ اس طرح کے واقعات ہماری زندگی میں کئی مرتبہ سرزد ہوئے ہونگے۔ اس طرح کے حالات میں ہم یہ بات ہرگز نہیں سوچتے کہ اگر اس بندے نے میری مدد نہیں کی تو کوئی وجہ ہو سکتی ہے۔

اگر ہم ان باتوں کو منطق سوچ سے سوچیں تو ہم اس کشمکش سے آزاد ہو سکتے ہیں۔ جو کہ ہماری دماغی صحت کے لیے فائدہ مند ہے۔

:احساسِ محرومی

احساس محرومی ایک ایسا مسئلہ ہے، جس کی وجہ سے ہم اپنی زندگی میں بہت نقصان حاصل کرتے ہیں۔ اس کے پاس میرے سے زیادہ پیسہ ہے، وہ زیادہ خوبصورت ہے، میرے پاس اس کے جیسی گاڑی نہیں ہے۔ ہم اپنی زندگی میں اس طرح کے جملے اکثر سُنتے ہیں۔ انہیں باتوں سے انسان کی دماغی صورتحال کا پتا چلتا ہے۔

جب انسان اس طرح کی باتوں کا شکار ہوتا ہے۔ تو وہ ان باتوں کی اُلجھن میں اپنی زندگی کی خوبصورتی کو بھی تباہ کر لیتا ہے۔ کسی دوسرے کی چیز کو پانے کی جدوجہد میں، وہ اپنی چیز سے بھی ہاتھ دھو بیٹھتا ہے۔ احساسِ محرومی سے بچنے کا ایک ہی حل ہے کہ، ہمارے پاس جو بھی ہے۔ ہم اس کا شکر ادا کریں۔

Related Articles

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Stay Connected

22,046FansLike
2,986FollowersFollow
18,400SubscribersSubscribe

Latest Articles