26 C
Lahore
Tuesday, October 19, 2021

جن کے سر پر بال نہیں وہ کورونا سے بچ کر رہیں

امریکہ کی ایک تحقیق کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ جن کے سر پر بال نہیں ہیں وہ کورونا کے زیادہ شکار ہوتے ہیں۔

امریکہ کی ریاست کیلیفورنیا میں موجوداپلائیڈ بیالوجی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ جن کے سر گنے ہیں ان کو کوررونا ہونے کے خطرات زیادہ ہوتے ہیں۔

برطانیہ کی آن لائن اخبار دی میل میں اس بات کو نچور نکالا گیا ہے کہ جن کے سر پر بال نہیں ہی ان کے لیے کورونا کے خطرات 2.5حد تک بڑھ جاتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ گنج پن کے افراد کو جب کورونا ہتا ہے تو علاج کے وقت ان کے لیے اور بھی مسائل درپیش ہوتے ہیں اور یہ ان کے لیے بہت خطرناک ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ تحقیق کے مطابق سر میں جہاں پر بال نہیں ہوتے وہاں پر اینڈروجین کورونا وائرس کو انسانی خلیوں پر حملہ کرنے کے لیے مدد فراہم کرتا ہے اور اس لیے ہمارے پاس کورونا سے متاثر جتنے بھی مرد آئے ہیں ان میں زیادہ تر گنجے ہی تھے۔

امریکہ کی ایک تحقیق کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ جن کے سر پر بال نہیں ہیں وہ کورونا کے زیادہ شکار ہوتے ہیں۔

امریکہ کی ریاست کیلیفورنیا میں موجوداپلائیڈ بیالوجی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ جن کے سر گنے ہیں ان کو کوررونا ہونے کے خطرات زیادہ ہوتے ہیں۔

برطانیہ کی آن لائن اخبار دی میل میں اس بات کو نچور نکالا گیا ہے کہ جن کے سر پر بال نہیں ہی ان کے لیے کورونا کے خطرات 2.5حد تک بڑھ جاتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ گنج پن کے افراد کو جب کورونا ہتا ہے تو علاج کے وقت ان کے لیے اور بھی مسائل درپیش ہوتے ہیں اور یہ ان کے لیے بہت خطرناک ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ تحقیق کے مطابق سر میں جہاں پر بال نہیں ہوتے وہاں پر اینڈروجین کورونا وائرس کو انسانی خلیوں پر حملہ کرنے کے لیے مدد فراہم کرتا ہے اور اس لیے ہمارے پاس کورونا سے متاثر جتنے بھی مرد آئے ہیں ان میں زیادہ تر گنجے ہی تھے۔

امریکہ کی ایک تحقیق کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ جن کے سر پر بال نہیں ہیں وہ کورونا کے زیادہ شکار ہوتے ہیں۔

امریکہ کی ریاست کیلیفورنیا میں موجوداپلائیڈ بیالوجی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ جن کے سر گنے ہیں ان کو کوررونا ہونے کے خطرات زیادہ ہوتے ہیں۔

برطانیہ کی آن لائن اخبار دی میل میں اس بات کو نچور نکالا گیا ہے کہ جن کے سر پر بال نہیں ہی ان کے لیے کورونا کے خطرات 2.5حد تک بڑھ جاتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ گنج پن کے افراد کو جب کورونا ہتا ہے تو علاج کے وقت ان کے لیے اور بھی مسائل درپیش ہوتے ہیں اور یہ ان کے لیے بہت خطرناک ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ تحقیق کے مطابق سر میں جہاں پر بال نہیں ہوتے وہاں پر اینڈروجین کورونا وائرس کو انسانی خلیوں پر حملہ کرنے کے لیے مدد فراہم کرتا ہے اور اس لیے ہمارے پاس کورونا سے متاثر جتنے بھی مرد آئے ہیں ان میں زیادہ تر گنجے ہی تھے۔

Related Articles

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Stay Connected

22,046FansLike
2,984FollowersFollow
18,400SubscribersSubscribe

Latest Articles