25 C
Lahore
Tuesday, October 19, 2021

پاکستانی نوٹوں کے متعلق 5 ایسے سچ، جن کے بارے میں شائد آپ نہ جانتےہوں۔

بانی پاکستان قائدِ اعظم کے بغیر ہمارے ملک کا نظام کبھی بھی نہیں چل سکتا تھا۔ مگر اب تو ہمیں اپنی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ہر جگہ قائد اعظم کا استعمال کرنا پڑتا ہے۔ آپ یقینا سمجھ گئے ہوں گے کہ ہم اپنی کرنسی کی بات کر رہے ہیں۔ اگر ہماری جیب میں پیسے نہ ہوں تو ہم اپنی ضروریات کو پورا نہیں کر سکتے۔

لیکن کیا آپ نے یہ کبھی جاننا چاہا کہ، ہمارے نوٹوں پر قائدِاعظم کی تصویر کہاں سے آئی؟ پاکستان کے بننے والے سب سے پہلے 1 روپے کے نوٹ پر تو قائدِاعظم کی تصویر بھی موجود نہ تھی۔

حامل ہذا کا مطلب کیا ہے؟

کیا آپ کو پتا ہے کہ پاکستانی کرنسی نوٹ پر لکھی ہوئی لائن، حامل ہذا کا کیا مطلب کیا ہے؟

اس لائن کا مطلب ہے کہ نوٹ کے نمبر میں موجود رقم یا سونا بینک کی طرف سے آپ کو ملے گا۔ لیکن اب حامل ہذا پر عمل درآمد نہیں ہوتا اور اگر کسی کو مل بھی جائے، تو وہ اس بات کو زیادہ پھیلاتا نہیں ہے۔

یہ نوٹ 50 روپے کا ہے، جو کہ 1957 میں بنایا گیا تھا۔ اس نوٹ پر قائداعظم کی تصویر موجود ہے۔

پاکستان نے جو پہلا نوٹ بنایا تھا، اس پر قائدِاعظم کی تصویر موجود نہیں تھی۔ دراصل یہ نوٹ بھارت کا تھا، جس پر پاکستان نے اپنی مہر لگائی تھی۔۔

پاکستان میں سب سے پہلے 1 روپے اور 5 روپے کا نوٹ بنایا گیا تھا۔1971 سے پہلے تمام نوٹوں پر اُردو اور بنگالی تحریر کی جاتی تھی۔ لیکن بعد میں نوٹوں پر صرف اُردو ہی لکھی جاتی تھی۔۔

:قائدِاعظم کی اصل تصویر

پاکستانی نوٹوں پر قائدِاعظم کی تصویر اصل تصویر سے بلکل نہیں ملتی، دراصل یہ تصویر قائدِاعظم نے 1943 میں کراچی کے ایک سٹوڈیو میں بنوائی تھی۔ اس کے بعد قائداعظم کی اس تصویر کو نوٹوں پر پرنٹ کیا جانے لگا۔ اسی لیے اب قائدِاعظم کی تصویر پاکستانی نوٹوں پر چھپی ہوئی ہوتی ہے۔

بانی پاکستان قائدِ اعظم کے بغیر ہمارے ملک کا نظام کبھی بھی نہیں چل سکتا تھا۔ مگر اب تو ہمیں اپنی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ہر جگہ قائد اعظم کا استعمال کرنا پڑتا ہے۔ آپ یقینا سمجھ گئے ہوں گے کہ ہم اپنی کرنسی کی بات کر رہے ہیں۔ اگر ہماری جیب میں پیسے نہ ہوں تو ہم اپنی ضروریات کو پورا نہیں کر سکتے۔

لیکن کیا آپ نے یہ کبھی جاننا چاہا کہ، ہمارے نوٹوں پر قائدِاعظم کی تصویر کہاں سے آئی؟ پاکستان کے بننے والے سب سے پہلے 1 روپے کے نوٹ پر تو قائدِاعظم کی تصویر بھی موجود نہ تھی۔

حامل ہذا کا مطلب کیا ہے؟

کیا آپ کو پتا ہے کہ پاکستانی کرنسی نوٹ پر لکھی ہوئی لائن، حامل ہذا کا کیا مطلب کیا ہے؟

اس لائن کا مطلب ہے کہ نوٹ کے نمبر میں موجود رقم یا سونا بینک کی طرف سے آپ کو ملے گا۔ لیکن اب حامل ہذا پر عمل درآمد نہیں ہوتا اور اگر کسی کو مل بھی جائے، تو وہ اس بات کو زیادہ پھیلاتا نہیں ہے۔

یہ نوٹ 50 روپے کا ہے، جو کہ 1957 میں بنایا گیا تھا۔ اس نوٹ پر قائداعظم کی تصویر موجود ہے۔

پاکستان نے جو پہلا نوٹ بنایا تھا، اس پر قائدِاعظم کی تصویر موجود نہیں تھی۔ دراصل یہ نوٹ بھارت کا تھا، جس پر پاکستان نے اپنی مہر لگائی تھی۔۔

پاکستان میں سب سے پہلے 1 روپے اور 5 روپے کا نوٹ بنایا گیا تھا۔1971 سے پہلے تمام نوٹوں پر اُردو اور بنگالی تحریر کی جاتی تھی۔ لیکن بعد میں نوٹوں پر صرف اُردو ہی لکھی جاتی تھی۔۔

:قائدِاعظم کی اصل تصویر

پاکستانی نوٹوں پر قائدِاعظم کی تصویر اصل تصویر سے بلکل نہیں ملتی، دراصل یہ تصویر قائدِاعظم نے 1943 میں کراچی کے ایک سٹوڈیو میں بنوائی تھی۔ اس کے بعد قائداعظم کی اس تصویر کو نوٹوں پر پرنٹ کیا جانے لگا۔ اسی لیے اب قائدِاعظم کی تصویر پاکستانی نوٹوں پر چھپی ہوئی ہوتی ہے۔

بانی پاکستان قائدِ اعظم کے بغیر ہمارے ملک کا نظام کبھی بھی نہیں چل سکتا تھا۔ مگر اب تو ہمیں اپنی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ہر جگہ قائد اعظم کا استعمال کرنا پڑتا ہے۔ آپ یقینا سمجھ گئے ہوں گے کہ ہم اپنی کرنسی کی بات کر رہے ہیں۔ اگر ہماری جیب میں پیسے نہ ہوں تو ہم اپنی ضروریات کو پورا نہیں کر سکتے۔

لیکن کیا آپ نے یہ کبھی جاننا چاہا کہ، ہمارے نوٹوں پر قائدِاعظم کی تصویر کہاں سے آئی؟ پاکستان کے بننے والے سب سے پہلے 1 روپے کے نوٹ پر تو قائدِاعظم کی تصویر بھی موجود نہ تھی۔

حامل ہذا کا مطلب کیا ہے؟

کیا آپ کو پتا ہے کہ پاکستانی کرنسی نوٹ پر لکھی ہوئی لائن، حامل ہذا کا کیا مطلب کیا ہے؟

اس لائن کا مطلب ہے کہ نوٹ کے نمبر میں موجود رقم یا سونا بینک کی طرف سے آپ کو ملے گا۔ لیکن اب حامل ہذا پر عمل درآمد نہیں ہوتا اور اگر کسی کو مل بھی جائے، تو وہ اس بات کو زیادہ پھیلاتا نہیں ہے۔

یہ نوٹ 50 روپے کا ہے، جو کہ 1957 میں بنایا گیا تھا۔ اس نوٹ پر قائداعظم کی تصویر موجود ہے۔

پاکستان نے جو پہلا نوٹ بنایا تھا، اس پر قائدِاعظم کی تصویر موجود نہیں تھی۔ دراصل یہ نوٹ بھارت کا تھا، جس پر پاکستان نے اپنی مہر لگائی تھی۔۔

پاکستان میں سب سے پہلے 1 روپے اور 5 روپے کا نوٹ بنایا گیا تھا۔1971 سے پہلے تمام نوٹوں پر اُردو اور بنگالی تحریر کی جاتی تھی۔ لیکن بعد میں نوٹوں پر صرف اُردو ہی لکھی جاتی تھی۔۔

:قائدِاعظم کی اصل تصویر

پاکستانی نوٹوں پر قائدِاعظم کی تصویر اصل تصویر سے بلکل نہیں ملتی، دراصل یہ تصویر قائدِاعظم نے 1943 میں کراچی کے ایک سٹوڈیو میں بنوائی تھی۔ اس کے بعد قائداعظم کی اس تصویر کو نوٹوں پر پرنٹ کیا جانے لگا۔ اسی لیے اب قائدِاعظم کی تصویر پاکستانی نوٹوں پر چھپی ہوئی ہوتی ہے۔

Related Articles

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Stay Connected

22,046FansLike
2,984FollowersFollow
18,400SubscribersSubscribe

Latest Articles